Category Archives: News and Politics

An Attack on Accountability Process

An Attack on Accountability Process

احتسابی عمل پر حملہطیبہ فاروق نے انتہائی مستعد انداز میں اور چابکدستی کے ساتھ وکٹ کے دونوں طرف کھیلتے ہوئے ایک ہی وقت میں نہ صرف مظلوم بننے کی کوشش کی ہے بلکہ ملک کے اندر دھیرے دھیرے جڑیں پکڑنے والے احتسابی عمل کو یکدم زمیں بوس کرنے کی بھر پور کوشش بھی کی ہے۔ یہ کسی بھی طرح سے تصور نہیں کیا جا سکتا کہ اس خاتون کے اس عمل کے پیچھے چند ایک مضبوط سازشی عناصر کے شاترانہ دماغ کار فرما نہ ہوں۔ گزشتہ چند دنوں سے مختلف لوگوں کے نقطہ ہائے نظر پر غور کرنے کے بعد صرف اور صرف اس نتیجے پر پہنچا جا سکتا ہے کہ اس ساری کاروائی کا واحد مقصد موجودہ احتسابی عمل کو جڑوں سے اکھیڑ پھینکنے کی ایک بھر پور کوشش کے سوا کچھ نہ تھا۔ احتسابی عمل کو اس طرح سے متنازع بنانے کا فائدہ صرف اور صرف ان افراد ہی کو ہو گا جن کے ارد گرد احتسابی عمل کا گھیرا تنگ ہو چکا ہے یا مستقبل قریب میں تنگ ہونے جا رہا ہے۔ قانونی ماہرین کے مطابق اس موقع پر چیئرمین نیب کے استعفے کا مطالبہ ایک شدید نوعیت کا احتسابی برہان پیدا کر سکتا ہے اور اس کا فائدہ عام آدمی کو نہیں بلکہ اس ملک کو اپنی اپنی باریاں لگا کر لوٹنے والے لٹیروں اور ان کی اولادوں ہی کو ہو سکتا ہےجنہوں نے پہلے ہی سے اپنا سب کچھ بیرون ملک محفوظ کر رکھا ہے۔ اس میں کوئی شک و شبہ نہیں کہ ایک مخصوص وقت پر ایک بڑے ادارے کے سربراہ کی گفتگو کو پہلے سے سوچے سمجھے منصوبے کے تحت منظرعام پر لایا گیا ہے۔ دوسری طرف اب تک یہ واضح ہو چکا ہے کہ اس خاتون کے خلاف ملک کے اندر مختلف تھانوں میں 42 سے زیادہ مقدمات پہلے ہی سےدرج ہیں۔ یہ بات پورے وثوق کے ساتھ کہی جا سکتی ہے کہ یہ خاتون جب پہلی بار کسی مقدمے کے سلسلہ میں تھانے میں گئی ہوں گی تو ان کو جناب جسٹس جاوید اقبال کے رویے سے ہزاروں گنا زیادہ نازیبا رویے اور رسوائی کا سامنا کرنا پڑا ہو گا۔ اس بات کا اندازہ ہر وہ پاکستان بخوبی لگا سکتا ہے جس کو اپنی زندگی میں کبھی نہ کبھی کسی نہ کسی تھانے میں معمولی سے کام کی خاطر جانے کا اتفاق ہوا ہو۔ حال ہی میں اسلام آباد کے اندر ننی فرشتہ کے والدین کے ساتھ پولیس کی طرف سے جس ہتک آمیز رویے کا مظاہرہ کیا گیا وہ سب کے لیے ایک زندہ مثال ہے۔ اس طرح کی بے شمار مثالیں ملک کے طول و عرض میں مختلف تھانوں کے اندر روز مرہ بنیادوں پر رقم ہوتی رہتی ہیں۔ لہذا متاثرین میں صرف اور صرف طیبہ ہی شامل نہیں کہ اس نازک وقت میں زمینی حقائق کو پس پشت ڈال کر طیبہ پر آنکھیں بند کر کے اعتبار کر لیا جائے اور سارے طوفان کا رخ جسٹس جاوید

Read More

A Meeting With Chairman NAB

Meeting With Chairman NAB Thursday 16 May 2019, Javid Chaudhry. My first meeting with Chairman NAB Justice Javed Iqbal, was held in 2006. At that time he was a Judge of the Supreme Court. I used to go to the house of Justice Rana Bhagwan Das. He would also go there and in this way I started meeting with him. After his retirement he became head of the Abbottabad Commission. I received information those days that the Prime Minister Raja Pervez Ashraf sent Justice Javed Iqbal a cheque of 67 Lakh Rupees [6.7 Million Rupees], but the Justice sent this cheque back to him with a letter saying. “That entire country’s honour has been stained due to Abbottabad tragedy so I shall feel ashamed to receive the charges for this inquiry.” His respect was increased in my heart. Later on he was appointed Chairman NAB on 08 October 2017. During these 19 months’ period my meeting with him was scheduled on several occasions but it could not take place because of one pretext or the other. But finally I was able to see him on 14 May 2019. When I reached his office at the NAB Headquarters, he was looking glad and in high spirits. I asked him, “Were your old assignments difficult or the current job?”. Justice Javed Iqbal responded. “It is more difficult because there is pressure from all sides but praise is to Allah I am able to deal with everything.” He said. “I have three daughters, and with Allah’s blessing all of them are settled in their respective homes. The knees of my wife have been operated. She watches TV all day and I get a reasonable amount of money and pension from the Supreme Court. I am living a comfortable life with this income”. He said. “I am now 73 years old. I have no idea how long I am going to remain alive further but there is no issue at all.” When I asked him, “do you have any threats?” He instantly replied. “There are too many threats. A few months back our agencies tracked the call of two people; an influential person was asking another influential person to offer him five billion rupees; the other one replied he is not ready to accept money.” “The first man said then scare him, the other one replied that we did try to scare him on many occasions; we even chased his car, we threatened to kill him, but he could not be scared. The first man then said okay then blow him up”. I asked, “who are those people?” The Justice replied, “I will let you know about this a few months later.” When I insisted he just told me that they are a joint venture of land grabbers and politicians. I said then “you should be careful”. At this the Justice replied. “I

Read More